ورزش، گھریلو کام اور خواتین ۔ ایک ایسی تحریر جو آپکی زندگی بدل دے گی

گھر کے کام کاج سے آپ اپنی کیلوریز تو گھٹا سکتی ہیں لیکن اسے ورزش کا نعمالبدل ہر گز نہیں سمجھنا چاہیے۔ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ باقاعدہ ورزش کے دوران انسان کی سانسیں اور دل کی دھڑکن معمول سے تیز ہو جاتی ہے جسم کا درجہ حرارت بڑھنے لگتا ہے ۔اور پسینہ آتا ہے ،اور ان کا وزن بھی مناسب رہتا ہے ۔ یوں وہ موٹے لوگوں کے مقابلے میں دائمی امراض سے محفوظ رہتے ہیں ۔ لیکن پھر بھی گھر کے کام کاج کو معمولی ہر گز نہیں سمجھنا چاہیے ۔خاص طور پر ان خواتین کے لئے جو ورزش سے کتراتی ہیں کیونکہ کچھ نہ کرنے سے کچھ کرنا بہتر ہے ۔

فرش کی صفائی ہر گھر میں ہوتی ہے ، مگر تھوڑی سی محنت کی جائے تو فرش بھی چمک جاتا ہے اور آپ کی جسمانی نعمتیں بھی برقرار رہتی ہیں ۔فرش پر بچھے قالین کو اگر ویکیوم کلینر سے صاف کیا جائے تو اس مین 119 کیلوریز جل جاتی ہیں ۔ جب کہ پونچھا لگانے سے 130 کیلوریز خرچ ہوتی ہیں ۔ کمرے میں موجود سامان ہٹا کر ان کے پیچھے کی صفائی کر لی جائے تو اس عمل میں آپ مزید 119 کیلوریز گھٹا سکتی ہیں ،اور اگر فرش کو چمکانے کے لیے کسی پاش وغیرہ کا استعمال کیا جائے تو آپ کا جسم مزید 102 کیلوریز کم کر سکتا ہے ۔ یعنی صرف فرش کی صفائی کر کے آپ کو ایک دن میں کل 470 کیلوریز سے چھٹکارا مل سکتا ہے ۔ عام طور پر اتنی کیلوریز ختم کرنے کے لیے آدھے گھنٹے تک دس منٹ فی گھنٹہ کی رفتار سے دوڑنا پڑتا ہے ۔ لیکن فرش کی صفائی کر کے یہ کام باآسانی کیا جاسکتا ہے ۔

اگر آپ اپنے گارڈن کی صفائی کریں ،سوکھے پتون کو سمیٹیں تو آپ کی 146 کیلوریز صرف ہوتی ہیں ۔گھاس کاٹنے کی مشین چلا کر 204 کیلوریز ختم کی جاسکتی ہیں ۔گڑھا کھودنے اور پودے لگانے میں 170 کیلوریز استعمال ہوتی ہیں ۔گھاس پھوس کاٹنے اور انہیں صاف کرنے میں 153 کیلوریز ختم ہوتی ہیں ۔صرف لان کی صفائی کر کے آپ ایک ہی دن میں 836 کیلوریز ختم کر سکتی ہیں ۔شائد آپ کو حیرت ہو کہ یہ تعداد ڈیڑھ گھنٹے کی ایروبک ورزش سے 122 کیلوریز زیادہ ہے ۔

Facebook Comments

POST A COMMENT.